کینیڈا کا ٹوریسٹ ویزا اپلائی کرنے کا طریقہ

کینیڈین امیگریشن قوانین کے مطابق پاکستانی شہریوں کیلئے کینیڈا میں داخل ہونے کیلئے کینیڈین ہائی کمیشن سے ویزا حاصل کرنا ضروری ہے جس کے لئے لاہور، کراچی میں اسلام آباد میں موجود کینڈین ویزا ایپلی کیشن سنٹر ز پر اپلائی کرنا ہوگا۔
کینیڈا بنیادی طور پر دو اقسام کے ویزے جاری کرتاہے۔ ایک کو عارضی سکونتی ویزا(Temporary resident visa) ) جبکہ دوسرے کو مستقل سکونتی ویزا(Permanent resident visa) کہتے ہیں۔
ٹمپریری ریذیڈنٹ ویزے مدت کے لحاظ سے تین انواع کے ہوتے ہیں۔
1 )سنگل انٹری ویزا:
یہ ویزا صرف ایک بار کینیڈا میں داخل ہونے کے بعد ایگزٹ ہونے پر ختم ہوجاتا ہے۔
2) ملٹی پل ویزا:
اس ویزہ پر مقررہ مدت میں جتنی بار مرضی آ جا سکتے ہیں۔
3 ) ٹرانزٹ ویزا:
یہ ویزا کینیڈا سے ہوتے ہوئے کسی اور ملک میں جانے والوں کو چند گھنٹے کے سٹے کیلئے جاری کیا جاتاہے۔
وزٹ ویزا:
سیروتفریح کیلئے وزٹ ویزا جاری کیا جاتا ہے جو کہ چھ ماہ تک کی مدت کا ہوتاہے۔ بطورٹورسٹ کینیڈا جانے کیلئے ضروری ہے کہ آپ صاحب حثییت ہوں اور ٹو رکے اخراجات کیلئے وافر رقم موجود ہو۔جس کے دستاویزی ثبوت بنک سٹیٹمنٹ اور جائیداد کے پیپرز ہونگے۔
اگر آپ کا کینڈین سپانسر آپ کے ٹورکے اخراجات کی ذمہ داری بھی لے رہا ہے تو پھر لمبی چوڑی سٹیٹمنٹ کے بغیر بھی ویزا لگ سکتاہے۔
وزیٹر ویزا دیتے وقت ویزا افسر نے یہ تسلی کرنا ہوتی ہے کہ وزیٹر سیروتفریح کے بعد مقررہمدت میں واپس آجائے گا۔درخواست گذار نے یہ چیزیں اپنے ڈاکومنٹس سے ثابت کرنا ہوتی ہیں۔ اگر آپ پاکستان کے ساتھ اپنا مضبوط معاشی ومعاشرتی تعلق ثابت کرپائیں تو پھر انٹرویو کے بغیر ہی ویزا لگ کر آجائے گا۔ آپ یہ دو پوائنٹ سمجھ جائیں اور ان پر پورے اترتے ہوں تو پھر کسی ملک کا بھی ویزاآپ کیلئے مسئلہ نہیں رہے گا۔
اپنے ملک سے مضبوط معاشی تعلق کا مطلب ہے کہ یہاں آ پکااپنا گھر ہو، جائیداد ہوکاروبارہو یا پھر اچھی نوکری ہو۔یعنی کہ آپ مالی طور پر مضبوط ہوں اور اپنے ملک میں رہ کر ہی اپنے مالی معاملات چلانا چاہتے ہوں،یہ شبہ نہ گزرے کہ ٹورسٹ کے طور پر کینڈا جائیں گے اور سلپ ہوجائیں گے ۔۔یعنی چھپ کر کام کریں گے۔دوسرا پوائنٹ ہے مضبوط معاشرتی رشتہ،اس کا مطلب ہے کہ آپ کا باقاعدہ خاندان پاکستان میں ہو جس کے بغیر آپ باہر نہ رہ سکتے ہوں اور آپ کو واپس آنا ہی پڑے۔یعنی کہ ماں ، باپ، بہن بھائی اور بیوی بچے وغیرہ۔اسی لئے سنگلز کی نسبت شادی شدہ افراد کو وزٹ ویزا ملنے کے چانسز ہمیشہ زیادہ ہوتے ہیں۔
کینڈین وزٹ ویزا کیلئے درکار دستاویزات:
ٌٌٌٌٌٌ۔۔۔سب سے پہلے آپ کو پاسپورٹ چاہیئے جس کی کم از کم اگلے چھ ماہ تک مدت ہو۔ ویزاسٹیکر اورامیگریشن سٹیمپس کیلئے پیجز خالی ہوں۔
۔۔۔پاسپورٹ کے انفارمیشن پیچ کی دو فوٹو کاپیاں
۔۔دوعدد تصاویر(ایمبیسی کی ہدایات کے مطابق)
۔۔۔پرشدہ ویزا فارمز
کینڈین ہائی کمیشن کی ویب سائٹ http://www.cic.gc.ca/سے ویزا فارم imm5257،فیملی انفارمیش فارم imm5645 اورسٹیچوٹری ڈیکلریشن آف کامن لاء یونین imm5409 ڈاؤن لوڈ کرکے فل اپ کریں۔
اگر ویزا ایپلی کیشن سنٹر اپنے ساتھ کوئی نمائندہ لیکر جانا چاہتے ہیں تو ریپریزنٹیٹو فارم imm5476 بھی لے لیں۔یہ تما م فارمز کمپیوٹر پر ہی فل اپ کریں اور پرنٹ نکال لیں ۔فارم اچھے طریقے سے پُر کریں‘ کوئی خانہ خالی مت چھوڑیں اور جو سوال آپ سے متعلقہ نہ ہو اس کے سامنے N/A لکھ دیں۔ فارم میں وہی معلومات درج کریں جس کے دستاویزی ثبوت آپ کے پاس موجود ہوں‘ نامکمل درخواست یا غلط معلومات پر ویزا کے اجراء میں تاخیر ہو سکتی ہے‘ درخواست واپس یا مسترد بھی کی جا سکتی ہے۔
یہ فارمز آپ ویزا ایپلی کیشن سنٹر جاکر بھی فل اپ کرسکتے ہیں ،وہا ں آپ کو معاونت بھی مل سکتی ہے جس کی تین سے ساڑھے تین ہزار روپے فیس لی جاتی ہے۔
۔۔۔اہلیہ اور بچے ساتھ ہیں تو ایک ہی فارم پر اپلائی کرسکتے ہیں۔
۔۔سپانسر لیٹر جس میں وزٹ کا مقصد بیان کیا گیا ہو۔
۔۔۔آپکا مکمل ٹور پروگرام( یعنی کہ کہاں کتنے دن کیلئے جانا ہے اور کیا دیکھنا ہے)
۔۔۔شادی شدہ ہیں تو نادرا سے جاری شدہ نکاح نامہ،بچے ہیں تو ان کے برتھ سرٹیفکیٹس (ترجمہ کے ساتھ)
۔۔۔بنک سٹیٹمنٹ اور جائیداد کے پیپرزکی مصدقہ نقول
۔۔۔بزنس مین ہیں تو اس کا ثبوت،یعنی این ٹی این ، چیمبر آف کامرس کی ممبر شپ( اگر ہوتو)
۔۔۔ملازمت کرتے ہیں تو اس کا سرٹیفکیٹ (سروس کارڈ اور سیلر سلپ وغیرہ)
۔۔ہوٹل بکنگ اور ریٹرن ٹکٹ( میزبان کے ہاں ٹھہرنا ہے تو ہوٹل بکنگ کی ضرورت نہیں ہے)
۔۔ویزا فیس سو کینڈین ڈالر تقریباً پاکستانی آٹھ ہزار روپے، 3300 روپے پراسیسنگ فیس اور 8500 روپے بائیومیٹرک فیس ویزا ایپلی کیشن سنٹر میں وصول کی جائے گی۔
سنٹر پر ایپلی کیشن ٹول کٹ کے مطابق دستاویزات پوری ہونے پر ہی آپ کی ویزا درخواست جمع کی جائے گی۔ یاد رکھیں کہ کینیڈین ہائی کمیشن میں دستی ویزا درخواستیں جمع نہیں کی جاتیں وہاں آپ کو اسی صورت داخلے کی اجازت ہو گی کہ اگر آپ کو ویزا انٹرویو کیلئے بلایا گیا ہو۔

آپ یہ صفحات بھی دیکھنا پسند کریں گے ۔ ۔ ۔

1 تبصرہ

  1. Ayesha says:

    Aslam o alikum.main aik business person hoon mny pahly b visit visa apply kia or refuse hogya waja hai likhi k purpose of visit.abi mny Sponcer k sath apply krna hai or foreign office ka letter b lagana hai tu kaisy kroun.

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Translate »
error: Content is protected !!
%d bloggers like this: