سویڈن کی شہریت کیلئے اہلیت

سویڈن کے قوانین کے تحت آپ دوہری شہریت رکھ سکتے ہیں اور یہ ان بنیادوں پر حاصل کی جا سکتی ہے۔
1)- مستقل رہائشی پرمٹ:
جب آپ کے پاس مستقل رہائشی پرمٹ ہو اور کم از کم 5سال سے سویڈن میں رہ رہے ہوں‘ عمر 18سال سے کم نہ ہو اور سویڈن میں رہائش کے دوران ریکارڈ صاف ستھرا رہا ہو تب آپ شہریت کے لیے درخواست دے سکتے ہیں۔ آپ کے اپلائی کرنے کے بعد امیگریشن بورڈ مختلف قانون نافذ کرنے والوں اداروں سے کردار کے متعلق تحقیقات کرے گا۔
2)- سویڈن میں پیدائش:
سویڈن میں بچوں کو والدین والی شہریت دینے کا طریقہ کار نافذ ہے۔ سویڈن میں پیدا ہونے والے بچے کے والدین میں سے کم از کم ایک کے پاس سویڈش شہریت ہو تو بچے کو خودبخود شہریت مل جائے گی۔
3)- اپنایا ہوا بچہ:
12سال سے کم عمر کے غیرملکی بچے جن کو سویڈش شہری اپنا لے وہ بھی 18سال کی عمر تک سویڈن میں رہائش پذیر رہے‘ شہریت کا حقدار ہو گا۔
سویڈش شہریت سے متعلق عمومی سوالات
س:مائیگریشن بورڈ ڈی این اے ٹیسٹ کس صورت میں کرائے گا؟
ج: فیملی ملاپ کے کیس میں اگر دستاویزات کے ذریعے خون کا رشتہ سو فیصد ثابت نہ ہو رہا ہو اور بورڈ حکام کو شبہ ہو جائے تو ڈی این اے ٹیسٹ کا سہارا لیا جائے گا۔
س: میں سویڈن کی شہری ہوں اور میں نے پاکستان جا کر شادی کی ہے‘ کیا میں پاکستانی شوہر کو ساتھ لا سکتی ہوں؟
ج: اس کے لیے شوہر کو سویڈش ایمبیسی میں فیملی ملاپ پرمٹ اپلائی کرنا پڑے گا پھر وہ آپ کے ساتھ آ سکے گا۔
س: میرے رشتہ دار کو فیملی ملاپ کے لیے رہائشی پرمٹ جاری ہو گیا ہے‘ کیا اس کے سفر کے لیے حکومت سے امداد مل سکتی ہے؟
ج: آپ خود بھی رہائشی پرمٹ ہولڈر ہیں تو جنیوا کنونشن کے تحت رشتہ دار کو سویڈن بلوانے کے لیے امداد کی درخواست دے سکتے ہیں جس پر مائیگریشن بورڈ مالی امداد مہیا کر سکتا ہے۔
س: مجھے کیسے علم ہو گا کہ میری پرمٹ کی درخواست مائیگریشن بورڈ تک پہنچ چکی ہے؟
ج: امیگریشن بورڈ پرمٹ کے لیے درخواست ملنے پر آپ کے سویڈن میں رہائش پذیر رشتہ دار کو طلب کر کے معلوماتی فارم پر کروائے گا اور انٹرویو کرے گا۔ رشتہ دار سے آپ کو معلوم ہو جائے گا۔ بعدازاں آپ کا رشتہ دار جب چاہے بورڈ سے معلومات حاصل کر سکتا ہے۔
س: کیا رہائشی پرمٹ پر رہنے والوں کو صحت کی سہولتیں میسر ہیں؟
ج: جی ہاں‘ اگر آپ بطور رجسٹرڈ رہائشی رہ رہے ہیں یعنی کہ ایک سال کا عرصہ گزارنے کے بعد رجسٹریشن کرا رکھی ہے تو آپ کو سویڈش شہری والی تمام سہولتیں ملیں گی۔
س:میں اپنی بیوی کو سویڈن بلانا چاہتا ہوں‘ کیا اس کے لیے کوئی مالی شرائط بھی ہوں گی؟
ج: بالکل نہیں‘ فیملی ملاپ کے کیسوں میں مالی حیثیت دیکھی جاتی ہے نہ کوئی مالی گارنٹی طلب کی جاتی ہے‘ اس میں رشتے زیادہ اہمیت رکھتے ہیں۔
س:میں 9ماہ کے لیے پاکستان جانا چاہتا ہوں‘ میرا مستقل رہائشی پرمٹ تو منسوخ نہیں ہو گا؟
ج: آپ 12ماہ تک مسلسل سویڈن سے باہر ہوں تو پھر پرمٹ منسوخ کیا جا سکتا ہے۔

آپ یہ صفحات بھی دیکھنا پسند کریں گے ۔ ۔ ۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Translate »
error: Content is protected !!
%d bloggers like this: